Font by Mehr Nastaliq Web

aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر

دم وصال یہ حسرت رہی رہی نہ رہی

وجیہ ثانی

دم وصال یہ حسرت رہی رہی نہ رہی

وجیہ ثانی

MORE BYوجیہ ثانی

    دم وصال یہ حسرت رہی رہی نہ رہی

    جمال یار کی حیرت رہی رہی نہ رہی

    اسے یہ ناز تھا خود پر کہ زندگی ہے مری

    سو زندگی کی حقیقت رہی رہی نہ رہی

    کمال کر کے دکھایا ہے میری آنکھوں نے

    اب ان میں پہلی سی وحشت رہی رہی نہ رہی

    لگا ہوا ہے زمانہ اسی تجسس میں

    وہ میرے پہلو کی زینت رہی رہی نہ رہی

    کوئی بھی ربط مگر دائمی نہیں ہوتا

    کسی کے حق میں طبیعت رہی رہی نہ رہی

    ہزاروں یار ہزاروں ہی چاہنے والے

    مگر نصیب میں خلوت رہی رہی نہ رہی

    ہے کیسا زور کا طوفاں بچیں بچیں نہ بچیں

    رہی رہی نہ رہی چھت رہی رہی نہ رہی

    یوں اپنے جذب میں گم ہو گیا ہے اب ثانیؔ

    شراب و مے کی ضرورت رہی رہی نہ رہی

    مأخذ :
    • کتاب : Mohabbat Rasty me.n hai (Pg. 91)
    • Author : Wajih Sani
    • مطبع : Samiya Publication (2016)
    • اشاعت : 2016

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے