دراز اتنا مری قید کا زمانہ تھا

ناطقؔ لکھنوی

دراز اتنا مری قید کا زمانہ تھا

ناطقؔ لکھنوی

MORE BYناطقؔ لکھنوی

    دراز اتنا مری قید کا زمانہ تھا

    کہ وہ چمن نہ رہا جس میں آشیانہ تھا

    بہائے اشک جو اس نے یہ اک بہانہ تھا

    کہ خوں بہا کو مرے خاک میں ملانا تھا

    بلا سے جان گئی انتظار میں میری

    مجھے تو آپ کا اک وعدہ آزمانا تھا

    جفائے چرخ ضروری تھی عشق سے پہلے

    کہ اپنے دل کا مجھے زور آزمانا تھا

    اب انتظار تمہارا میں اور کیا کرتا

    ہوئی تھی دیر بہت مجھ کو دور جانا تھا

    جہاں ہم آج غریب الدیار ہیں ناطقؔ

    اسی دیار میں اپنا غریب خانہ تھا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY