درد بڑھتا ہی رہے ایسی دوا دے جاؤ

انور مسعود

درد بڑھتا ہی رہے ایسی دوا دے جاؤ

انور مسعود

MORE BYانور مسعود

    درد بڑھتا ہی رہے ایسی دوا دے جاؤ

    کچھ نہ کچھ میری وفاؤں کا صلا دے جاؤ

    یوں نہ جاؤ کہ میں رو بھی نہ سکوں فرقت میں

    میری راتوں کو ستاروں کی ضیا دے جاؤ

    ایک بار آؤ کبھی اتنے اچانک پن سے

    نا امیدی کو تحیر کی سزا دے جاؤ

    دشمنی کا کوئی پیرایۂ نادر ڈھونڈو

    جب بھی آؤ مجھے جینے کی دعا دے جاؤ

    وہی اخلاص و مروت کی پرانی تہمت

    دوستو کوئی تو الزام نیا دے جاؤ

    کوئی صحرا بھی اگر راہ میں آئے انورؔ

    دل یہ کہتا ہے کہ اک بار صدا دے جاؤ

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY
    بولیے