درد دل بھی غم دوراں کے برابر سے اٹھا

مصطفی زیدی

درد دل بھی غم دوراں کے برابر سے اٹھا

مصطفی زیدی

MORE BYمصطفی زیدی

    درد دل بھی غم دوراں کے برابر سے اٹھا

    آگ صحرا میں لگی اور دھواں گھر سے اٹھا

    تابش حسن بھی تھی آتش دنیا بھی مگر

    شعلہ جس نے مجھے پھونکا مرے اندر سے اٹھا

    کسی موسم کی فقیروں کو ضرورت نہ رہی

    آگ بھی ابر بھی طوفان بھی ساغر سے اٹھا

    بے صدف کتنے ہی دریاؤں سے کچھ بھی نہ ہوا

    بوجھ قطرے کا تھا ایسا کہ سمندر سے اٹھا

    چاند سے شکوہ بہ لب ہوں کہ سلایا کیوں تھا

    میں کہ خورشید جہاں تاب کی ٹھوکر سے اٹھا

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    عابدہ پروین

    عابدہ پروین

    مآخذ:

    • کتاب : qabaa-e-saaz

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY