درد ہو تو دوا کرے کوئی

ریاضؔ خیرآبادی

درد ہو تو دوا کرے کوئی

ریاضؔ خیرآبادی

MORE BYریاضؔ خیرآبادی

    درد ہو تو دوا کرے کوئی

    موت ہی ہو تو کیا کرے کوئی

    نہ ستائے کوئی انہیں شب وصل

    ان کی باتیں سنا کرے کوئی

    بند ہوتا ہے اب در توبہ

    در مے خانہ وا کرے کوئی

    قبر میں آ کے نیند آئی ہے

    نہ اٹھائے خدا کرے کوئی

    تھیں یہ دنیا کی باتیں دنیا تک

    حشر میں کیا گلا کرے کوئی

    نہ اٹھی جب جھکی جبین نیاز

    کس طرح التجا کرے کوئی

    بوسہ لیں غیر دیں سزا ہم کو

    ہم ہیں مجرم خطا کرے کوئی

    بگڑے گیسو تو بولے جھنجھلا کر

    نہ بلائیں لیا کرے کوئی

    نزع میں کیا ستم کا موقع ہے

    وقت ہے اب دعا کرے کوئی

    حشر کے دن کی رات ہو کہ نہ ہو

    اپنا وعدہ وفا کرے کوئی

    نہ ستائے کوئی کسی کو ریاضؔ

    نہ ستم کا گلا کرے کوئی

    مآخذ:

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY