درد سمجھے نہ کوئی درد کا درماں سمجھے

بختیار ضیا

درد سمجھے نہ کوئی درد کا درماں سمجھے

بختیار ضیا

MORE BYبختیار ضیا

    درد سمجھے نہ کوئی درد کا درماں سمجھے

    لوگ وحشت کو علاج غم دوراں سمجھے

    دل پہ کیا گزری اچانک ترے آ جانے سے

    اس نزاکت کو بھلا کیا کوئی مہماں سمجھے

    عرش و کرسی سے پرے رکھتے ہیں جو لانگہہ فکر

    منظر دہر کو ہم روزن زنداں سمجھے

    وہ بھڑکتے ہوئے شعلے تھے نشیمن کے مرے

    دور سے آپ جنہیں سرو چراغاں سمجھے

    یوں بھی حالات سے سمجھوتہ کیا ہے اکثر

    دشمن جاں کو بھی ہم اپنا نگہباں سمجھے

    مأخذ :
    • کتاب : Shab Charagh (Pg. 67)
    • Author : Bakhtiyar Ziya
    • مطبع : Markaz-e-adab (1993)
    • اشاعت : 1993

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY