درد سے میرے ہے تجھ کو بے قراری ہائے ہائے

مرزا غالب

درد سے میرے ہے تجھ کو بے قراری ہائے ہائے

مرزا غالب

MORE BYمرزا غالب

    درد سے میرے ہے تجھ کو بے قراری ہائے ہائے

    کیا ہوئی ظالم تری غفلت شعاری ہائے ہائے

    تیرے دل میں گر نہ تھا آشوب غم کا حوصلہ

    تو نے پھر کیوں کی تھی میری غم گساری ہائے ہائے

    کیوں مری غم خوارگی کا تجھ کو آیا تھا خیال

    دشمنی اپنی تھی میری دوست داری ہائے ہائے

    عمر بھر کا تو نے پیمان وفا باندھا تو کیا

    عمر کو بھی تو نہیں ہے پائیداری ہائے ہائے

    زہر لگتی ہے مجھے آب و ہوائے زندگی

    یعنی تجھ سے تھی اسے نا سازگاری ہائے ہائے

    گل فشانی ہائے ناز جلوہ کو کیا ہو گیا

    خاک پر ہوتی ہے تیری لالہ کاری ہائے ہائے

    شرم رسوائی سے جا چھپنا نقاب خاک میں

    ختم ہے الفت کی تجھ پر پردہ داری ہائے ہائے

    خاک میں ناموس پیمان محبت مل گئی

    اٹھ گئی دنیا سے راہ و رسم یاری ہائے ہائے

    ہاتھ ہی تیغ آزما کا کام سے جاتا رہا

    دل پہ اک لگنے نہ پایا زخم کاری ہائے ہائے

    کس طرح کاٹے کوئی شب ہائے تار برشگال

    ہے نظر خو کردۂ اختر شماری ہائے ہائے

    گوش مہجور پیام و چشم محروم جمال

    ایک دل تس پر یہ نا امید واری ہائے ہائے

    عشق نے پکڑا نہ تھا غالبؔ ابھی وحشت کا رنگ

    رہ گیا تھا دل میں جو کچھ ذوق خواری ہائے ہائے

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    ملکہ پکھراج

    ملکہ پکھراج

    مأخذ :
    • کتاب : Deewan-e-Ghalib Jadeed (Al-Maroof Ba Nuskha-e-Hameedia) (Pg. 310)
    • Author : Mufti Mohammad Anwar-ul-haque
    • مطبع : Madhya Pradesh Urdu Academy ,Bhopal (1904-1982)
    • اشاعت : 1904-1982

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY