دشت کی پیاس کسی طور بجھائی جاتی

رمزی آثم

دشت کی پیاس کسی طور بجھائی جاتی

رمزی آثم

MORE BYرمزی آثم

    دشت کی پیاس کسی طور بجھائی جاتی

    کوئی تصویر ہی پانی کی دکھائی جاتی

    ایک دریا چلا آیا ہے مرے ساتھ اسے

    روکنے کے لیے دیوار اٹھائی جاتی

    ہم نئے نقش بنانے کا ہنر جانتے ہیں

    ایسا ہوتا تو نئی شکل بنائی جاتی

    اب یہ آنسو ہیں کہ رکتے ہی نہیں ہیں ہم سے

    دل کی آواز ہی پہلے نہ سنائی جاتی

    صرف آزار اٹھانے کی ہمیں عادت ہے

    ہم پہ سایا نہیں دیوار گرائی جاتی

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    دشت کی پیاس کسی طور بجھائی جاتی نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY