دولت ہے بڑی چیز حکومت ہے بڑی چیز

نوح ناروی

دولت ہے بڑی چیز حکومت ہے بڑی چیز

نوح ناروی

MORE BYنوح ناروی

    دولت ہے بڑی چیز حکومت ہے بڑی چیز

    ان سب سے بشر کے لئے عزت ہے بڑی چیز

    جب ذکر کیا میں نے کبھی وصل کا ان سے

    وہ کہنے لگے پاک محبت ہے بڑی چیز

    بس آپ کے نزدیک تو اے حضرت واعظ

    آیت ہے بڑی چیز روایت ہے بڑی چیز

    پوری نہ اگر ہو تو کوئی چیز نہیں ہے

    نکلے جو مرے دل سے تو حسرت ہے بڑی چیز

    اے نوحؔ نہ تم اس کو حسینوں میں گنواؤ

    یہ خوب سمجھ لو کہ ریاست ہے بڑی چیز

    مأخذ :
    • کتاب : Intekhab-e-Sukhan(Jild-2) (Pg. 141)
    • Author : Hasrat Mohani
    • مطبع : uttar pradesh urdu academy (1983)
    • اشاعت : 1983

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY