دیکھ کوہ نارسا بن کر بھرم رکھا ترا

امین راحت چغتائی

دیکھ کوہ نارسا بن کر بھرم رکھا ترا

امین راحت چغتائی

MORE BYامین راحت چغتائی

    دیکھ کوہ نارسا بن کر بھرم رکھا ترا

    میں کہ تھا اک ذرۂ بیتاب اے صحرا ترا

    کون ساقی کیسا پیمانہ کہاں صہبائے تیز

    آبرو یوں رہ گئی ہے سر میں تھا سودا ترا

    سب گریباں سی رہے ہیں صحن گل میں بیٹھ کر

    کون اب صحرا کو جائے، ہے کہاں چرچا ترا

    اب عناصر میں توازن ڈھونڈنے جائیں کہاں

    ہم جسے ہم راز سمجھے پاسباں نکلا ترا

    بند دروازے کئے بیٹھے ہیں اب اہل جنوں

    تختیاں ناموں کی پڑھ کر کیا کرے رسوا ترا

    داد تو اہل مروت دے گئے راحت تجھے

    شعر بھی ان کو نظر آیا کوئی اچھا ترا

    مأخذ :
    • کتاب : Range-e-Gazal (Pg. 145)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY