دیکھ لو شوق نا تمام مرا

مومن خاں مومن

دیکھ لو شوق نا تمام مرا

مومن خاں مومن

MORE BYمومن خاں مومن

    دیکھ لو شوق نا تمام مرا

    غیر لے جائے ہے پیام مرا

    بے اثر ہے فغان خون آلود

    کیوں نہ ہوئے خراب کام مرا

    آتشیں خو سے آرزوئے وصال

    پک گیا اب خیال خام مرا

    دیکھنا کثرت بلا نوشی

    کاسۂ آسماں ہے جام مرا

    رتبہ افتادگی کا دیکھو ہے

    عرش کے بھی پرے مقام مرا

    کس صنم کو چھڑا دیا واعظ

    لے خدا تجھ سے انتقام مرا

    ہو کے یوسف جو دل چراتے ہو

    کون ہو جائے گا غلام مرا

    اس لب لعل کی شکایت ہے

    کیونکہ رنگیں نہ ہو کلام مرا

    تو نے رسوا کیا مجھے اب تک

    کوئی بھی جانتا تھا نام مرا

    زانوئے بت پہ جان دی دیکھا

    مومنؔ انجام و اختتام مرا

    بندگی کام آ رہی آخر

    میں نہ کہتا تھا کیوں سلام مرا

    مآخذ

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY