دیو قامت بنا ہوا گھوموں

مدحت الاختر

دیو قامت بنا ہوا گھوموں

مدحت الاختر

MORE BYمدحت الاختر

    دیو قامت بنا ہوا گھوموں

    اپنے قد کو مگر چھپا نہ سکوں

    وہ بھی پہچانتا نہیں ہے مجھے

    میں بھی اپنی نظر کو جھٹلا دوں

    ہٹ گیا ہوں مدار سے اپنے

    اب میں یوں ہی خلا میں پھرتا ہوں

    ٹیلی ویژن پہ ایک چہرہ ہے

    کم سے کم اس کو دیکھ سکتا ہوں

    کب سے سوکھی پڑی ہے یہ دھرتی

    میں کسی کے لہو کا پیاسا ہوں

    اڑتے پھرتے ہیں ہر جگہ ہٹیل

    کوئی فرہاد ہے نہ اب مجنوں

    پوچھتی ہیں بھری پری سڑکیں

    کون ہے جس کے ساتھ میں گھوموں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے