ڈھل چکی شام گھر اب لوٹ کے جایا جائے

جتیندر شرما

ڈھل چکی شام گھر اب لوٹ کے جایا جائے

جتیندر شرما

MORE BYجتیندر شرما

    ڈھل چکی شام گھر اب لوٹ کے جایا جائے

    آئینہ خود کو حقیقت کا دکھایا جائے

    ہے ابھی صبح کبھی شام بھی ہوگی اس کی

    چڑھتے سورج کو اترنا بھی سکھایا جائے

    کیوں ستارے ہی ہوں حق دار فلک کے ہر دم

    خواب ذرے کو بھی عظمت کا دکھایا جائے

    ایک مدت سے مقدر مرا ہے روٹھا ہوا

    طرز کاوش سے چلو اس کو منایا جائے

    اک شجر سوچ رہا دھوپ میں تنہا سا کھڑا

    کیسے اس شہر کو جلنے سے بچایا جائے

    اس سے پہلے کی چراغوں سے سجائیں محفل

    ایک مفلس کا بجھا چولہا جلایا جائے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY
    بولیے