دل دشت ہے تو اشک فشانی کریں گے ہم

ابھنندن پانڈے

دل دشت ہے تو اشک فشانی کریں گے ہم

ابھنندن پانڈے

MORE BY ابھنندن پانڈے

    دل دشت ہے تو اشک فشانی کریں گے ہم

    یہ کام بس برائے روانی کریں گے ہم

    بیٹھے ہیں شامیانۂ شب رنگ میں اداس

    رنگ رخ شفق ابھی دھانی کریں گے ہم

    پچھلے برس کے عشق پہ ہم کو یقین تھا

    اگلے برس کا عشق گمانی کریں گے ہم

    چاہیں تو اس کو تیغ خموشی سے کاٹ دیں

    لیکن جنوں سے جنگ زبانی کریں گے ہم

    ٹھہرے ہیں سیل حرف و معانی میں دم بخود

    ظاہر کبھی تو درد نہانی کریں گے ہم

    قامت پہ اپنی ناز کرے کوہ شام غم

    گھبرا کے آج مرثیہ خوانی کریں گے ہم

    دریا کی سمت بھاگتے جائیں گے ساری عمر

    آخر میں اپنی پیاس کو پانی کریں گے ہم

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY