دل پر خوں جو جام ہے میرا

مرزا جواں بخت جہاں دار

دل پر خوں جو جام ہے میرا

مرزا جواں بخت جہاں دار

MORE BYمرزا جواں بخت جہاں دار

    دل پر خوں جو جام ہے میرا

    خون شرب مدام ہے میرا

    رند و آوارہ نام ہے میرا

    سب میں یہ احترام ہے میرا

    عارض و زلف یار کا دھیان

    مونس صبح و شام ہے میرا

    عمر گزری کہ مثل نقش قدم

    اس کی رہ میں قیام ہے میرا

    آہ اک دن بھی دیکھ کر نہ کہا

    یہ بھی کوئی نقش گام ہے میرا

    قاصد اس حرف نا شنو تک جلد

    یہی جاگہ پیام ہے میرا

    ابھی آنا ہے تو شتابی آ

    کام ورنہ تمام ہے میرا

    ہے اسی بت کے طاق ابرو کو

    جو سجود و سلام ہے میرا

    گاہ بے خود ہوں گہہ بہ خود ہر دم

    کوچ اور یہ مقام ہے میرا

    اے جہاں دارؔ ہوں میں صید اسیر

    ہر خم زلف دام ہے میرا

    مأخذ :

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY
    بولیے