دل ہے کہ جستجو کے سرابوں میں قید ہے

معصوم شرقی

دل ہے کہ جستجو کے سرابوں میں قید ہے

معصوم شرقی

MORE BYمعصوم شرقی

    دل ہے کہ جستجو کے سرابوں میں قید ہے

    ورنہ ہر ایک چہرہ نقابوں میں قید ہے

    فرصت کہاں کہ ڈھونڈے غم دہر کا علاج

    ہر شخص اپنے غم کے حسابوں میں قید ہے

    کیا خاک ہوں نصیب یہاں سر بلندیاں

    جوش عمل تو آج کتابوں میں قید ہے

    تسخیر کائنات کی مہلت کسے یہاں

    ہر ذہن اپنے جملہ حسابوں میں قید ہے

    سونے پڑے ہیں دل کے در و بام ان دنوں

    جلووں کا اہتمام حجابوں میں قید ہے

    لے دے کے بچ رہی ہے جو تہذیب کی زباں

    معصومؔ وہ بھی عالی جنابوں میں قید ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY