دل جو صورت گر معنی کا صنم خانہ بنے

برق دہلوی

دل جو صورت گر معنی کا صنم خانہ بنے

برق دہلوی

MORE BYبرق دہلوی

    دل جو صورت گر معنی کا صنم خانہ بنے

    آنکھ جس شے پہ پڑے جلوۂ جانانہ بنے

    اتنے ہی ہو گئے ہم منزل عرفاں کے قریب

    جس قدر رسم و رہ دہر سے بیگانہ بنے

    تا در یار پہنچتا ہے وہ خود رفتۂ شوق

    اپنی ہستی سے جو اس راہ میں بیگانہ بنے

    ظرف مے ٹوٹ کے بھی ہونے نہ پائے بے کار

    ہو شکستہ کوئی شیشہ تو وہ پیمانہ بنے

    سعی ناکام سے میں ہاتھ اٹھاؤں گا نہ برقؔ

    میری بگڑی ہوئی تقدیر بنے یا نہ بنے

    مأخذ :
    • کتاب : Mujalla Dastavez (Pg. 113)
    • Author : Aziz Nabeel
    • مطبع : Edarah Dastavez (2013-14)
    • اشاعت : 2013-14

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY