دل کے ویرانے میں کچھ پھول تمنا کے کھلے

منظر نقوی

دل کے ویرانے میں کچھ پھول تمنا کے کھلے

منظر نقوی

MORE BYمنظر نقوی

    دل کے ویرانے میں کچھ پھول تمنا کے کھلے

    ہم بجھے لوگ ترے باغ میں آ جا کے کھلے

    موسم عشق کی بارش میں نہائے اتنا

    ہم کسی چشم تصور میں بھی مرجھا کے کھلے

    آرزو ہے مرے مرقد پہ اگے بند کلی

    تو جب آئے تو ترے شوق میں لہرا کے کھلے

    دشت میں شور خموشی کا سنا ہے میں نے

    آبلے پاؤں کے سوئے ہوئے گھبرا کے کھلے

    موسم درد کی آندھی میں تری یاد آئی

    ہم تو ہجرت میں بھی منظر تجھے چمکا کے کھلے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY