دل کی بات نہ مانی ہوتی عشق کیا کیوں پیری میں

توصیف تبسم

دل کی بات نہ مانی ہوتی عشق کیا کیوں پیری میں

توصیف تبسم

MORE BYتوصیف تبسم

    دلچسپ معلومات

    شمارہ 287 دسمبر 2004

    دل کی بات نہ مانی ہوتی عشق کیا کیوں پیری میں

    اپنی مرضی بھی شامل ہے اپنی بے توقیری میں

    درد اٹھا تو ریزہ دل کا گوشۂ لب پر آن جما

    خوش ہیں کوئی نقش تو ابھرا بارے بے تصویری میں

    قید میں گل جو یاد آیا تو پھول سا دامن چاک کیا

    اور لہو پھر روئے گویا بھولے نہیں اسیری میں

    جانے والے چلے گئے پر لمحہ لمحہ ان کی یاد

    دکھ میلے میں انگلی تھامے ساتھ چلی دل گیری میں

    طوق گلے کا پاؤں کی بیڑی آہن گر نے کاٹ دیئے

    اپنے آپ سے باہر نکلے زور کہاں زنجیری میں

    شکر ہے جتنی عمر گزاری نان و نمک کی فکر نہ تھی

    ہاتھ کا تکیہ خاک کا بستر حاصل رہے فقیری میں

    مأخذ :
    • کتاب : Shabkhoon (Urdu Monthly) (Pg. 915)
    • Author : Shamsur Rahman Faruqi
    • مطبع : Shabkhoon Po. Box No.13, 313 rani Mandi Allahabad (June December 2005áIssue No. 293 To 299âPart II)
    • اشاعت : June December 2005áIssue No. 293 To 299âPart II

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY