دل کو شائستۂ احساس تمنا نہ کریں

علیم اختر

دل کو شائستۂ احساس تمنا نہ کریں

علیم اختر

MORE BYعلیم اختر

    دل کو شائستۂ احساس تمنا نہ کریں

    آپ اس انداز نظر سے مجھے دیکھا نہ کریں

    یک بہ یک لطف و عنایت کا ارادا نہ کریں

    آپ یوں اپنی جفاؤں کو تماشا نہ کریں

    ان کو یہ فکر ہے اب ترک تعلق کر کے

    کہ ہم اب پرسش احوال کریں یا نہ کریں

    ہاں مرے حال پہ ہنستے ہیں زمانے والے

    آپ تو واقف حالات ہیں ایسا نہ کریں

    ان کی دزدیدہ نگاہی کا تقاضا ہے کہ اب

    ہم کسی اور کو کیا خود کو بھی دیکھا نہ کریں

    وہ تعلق ہے ترے غم سے کہ اللہ اللہ

    ہم کو حاصل ہو خوشی بھی تو گوارا نہ کریں

    اس میں پوشیدہ ہے پندار محبت کی شکست

    آپ مجھ سے بھی مرے حال کو پوچھا نہ کریں

    نہ رہا تیری محبت سے تعلق نہ سہی

    نسبت غم سے بھی کیا خود کو پکارا نہ کریں

    میں کہ خود اپنی وفاؤں پہ خجل ہوں اخترؔ

    وہ تو لیکن ستم و جور سے توبا نہ کریں

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    دل کو شائستۂ احساس تمنا نہ کریں نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY