دوست بن کر وہ دلستاں نہ رہا

مرلی دھر شاد

دوست بن کر وہ دلستاں نہ رہا

مرلی دھر شاد

MORE BY مرلی دھر شاد

    دوست بن کر وہ دلستاں نہ رہا

    چار دن بھی تو مہرباں نہ رہا

    دل کے دم سے تھا حسرتوں کا ہجوم

    اب وہ سالار کارواں نہ رہا

    کیا حسینوں نے ظلم چھوڑ دیا

    دل میں کیوں درد کا نشاں نہ رہا

    کعبہ میں دیر میں کلیسا میں

    ذکر اس کا کہاں کہاں نہ رہا

    دل میں میرے وہ چھپ کے بیٹھ گئے

    جب کوئی ان کا پاسباں نہ رہا

    مجھ سے گر روٹھ کر گیا کوئی

    بے وفائی کا بھی گماں نہ رہا

    آپ کے ظلم بھی خوشی سے سہے

    شادؔ کس روز شادماں نہ رہا

    مآخذ:

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY