دوستی چاہ دلی مہر و محبت گزری

محمد امان نثار

دوستی چاہ دلی مہر و محبت گزری

محمد امان نثار

MORE BYمحمد امان نثار

    دوستی چاہ دلی مہر و محبت گزری

    سیدھے منہ بات بھی کرتا نہیں رت گزری

    ایک مصرعہ جو پڑھا وصف قد یار میں ہم

    سرو کے سر پہ گلستاں میں قیامت گزری

    ہم نشیں پوچھ نہ کچھ چپ ہی بھلی ہے اس سے

    شب فرقت میں جو کچھ ہم پہ صعوبت گزری

    صبح کو نام کسی نے جو لیا اس کا یہاں

    دل مشتاق پہ بے طرح کی حالت گزری

    آنکھ ہم سے جو ملاتا نہیں وہ آئینہ رو

    خاکساروں سے یہ کیا دل میں کدورت گزری

    کبھو لڑتا تھا کبھو ہنس کے لپٹ جاتا تھا

    کیوں نثارؔ اس سے عجب راتوں کی صحبت گزری

    مأخذ :
    • کتاب : intekhaab-e-sukhan(avval) (Pg. 91)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY