دنیا کو دیکھیے ذرا آنکھیں تو کھولیے

مرتضیٰ برلاس

دنیا کو دیکھیے ذرا آنکھیں تو کھولیے

مرتضیٰ برلاس

MORE BYمرتضیٰ برلاس

    دنیا کو دیکھیے ذرا آنکھیں تو کھولیے

    سورج چڑھا ہے سر پہ بڑی دیر سو لیے

    ساری مسرتیں تری خوشیوں پہ وار دیں

    جتنے بھی غم ملے ترے غم میں سمو لیے

    ہم کو نہ جانے کیا ہوا پھولوں کو دیکھ کر

    ہاتھوں میں ہم نے جان کے کانٹے چبھو لیے

    مجبوریاں کہیں کہ اسے سادگی کہیں

    جس نے بھی ہنس کے بات کی ہم ساتھ ہو لیے

    روئے خطاب ہے کسی نازک مزاج سے

    چہرے پہ حال لکھیے نگاہوں سے بولئے

    سیپی کھلی رہے گی جو موتی نکل گئے

    آنکھوں کی سیپیوں سے جواہر نہ رولیے

    تازہ رکھا ہے ذہن میں کرب شکستگی

    جب کچھ نہ بن پڑا تو کہیں چھپ کے رو لیے

    مأخذ :
    • کتاب : kulliyat -e-Murtaza Barlas (Pg. 101)
    • Author : Murtaza Barlas
    • مطبع : Alhamd Publication Lahore (2011)
    • اشاعت : 2011

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY