دور تک پھیلا نہیں دل کا دھواں اچھا ہوا

سندیپ گپتے

دور تک پھیلا نہیں دل کا دھواں اچھا ہوا

سندیپ گپتے

MORE BYسندیپ گپتے

    دور تک پھیلا نہیں دل کا دھواں اچھا ہوا

    پھر سمٹ آئیں مجھی میں آندھیاں اچھا ہوا

    رنگ لے آئیں مری مدہوشیاں اچھا ہوا

    ہوش میں آنے لگا سارا جہاں اچھا ہوا

    کیا غضب ہوتا اگر وہ آزماتا ضد مری

    جھک گیا خود ہی زمیں پر آسماں اچھا ہوا

    چار پل تھے وصل کے دو چار گھڑیاں پیار کی

    زندگی گزری انہیں کے درمیاں اچھا ہوا

    ہر حقیقت میرے خوابوں سے ہی ٹکراتی رہی

    ساتھ میرے تھے کئی وہم و گماں اچھا ہوا

    آندھیاں آئیں اٹھا کر لے گئیں سب بستیاں

    میں نے اک دل میں بنایا تھا مکاں اچھا ہوا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY