ایک دن ذہن میں آسیب پھرے گا ایسا

ساقی فاروقی

ایک دن ذہن میں آسیب پھرے گا ایسا

ساقی فاروقی

MORE BY ساقی فاروقی

    ایک دن ذہن میں آسیب پھرے گا ایسا

    یہ سمن زار نظر آئے گا صحرا ایسا

    میں نے کیا رنج دیے اشک نہ لوٹائے مجھے

    اے مرے دل کوئی بے فیض نہ دیکھا ایسا

    ایک مدت سے کوئی لہر نہ اٹھی مجھ میں

    میری آنکھوں سے چھپا چاند کا چہرہ ایسا

    رات کہتی ہے ملاقات نہ ہوگی اپنی

    تو کوئی خواب نہ میں نیند کا ماتا ایسا

    جسم کی سطح پہ کاغذ کی طرح زندہ ہیں

    تو سمندر ہے نہ میں ڈوبنے والا ایسا

    تیرے چہرے پہ اجالے کی سخاوت ایسی

    اور مری روح میں نادار اندھیرا ایسا

    ہر نئے درد کی پوشاک پہن لی میں نے

    جاں مہذب نہ ہوئی میں تھا برہنہ ایسا

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    ایک دن ذہن میں آسیب پھرے گا ایسا نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed from your favorites