ایک صحرا ہے مری آنکھ میں حیرانی کا

رفیق راز

ایک صحرا ہے مری آنکھ میں حیرانی کا

رفیق راز

MORE BYرفیق راز

    ایک صحرا ہے مری آنکھ میں حیرانی کا

    میرے اندر تو مگر شور ہے طغیانی کا

    کوئی درویش خدا پرمست ابھی شہر میں ہے

    نقش باقی ہے ابھی دشت کی ویرانی کا

    سانس روکے ہے کھڑی در سے ترے دور ہوا

    خاک دل یہ ہے سبب تیری پریشانی کا

    ہم فقیروں کا توکل ہی تو سرمایہ ہے

    شکوہ کس منہ سے کریں بے سر و سامانی کا

    دل کے بازار میں ہلچل سی مچا دی اس نے

    مجھ کو بھی دھوکا ہوا یوسف لا ثانی کا

    دیکھتا ہوں میں ابھی خواب اسی کے شب و روز

    یہ خلاصہ ہے مرے قصۂ طولانی کا

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق,

    نعمان شوق

    ایک صحرا ہے مری آنکھ میں حیرانی کا نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY
    بولیے