فائدہ ہم کو مٹانے سے بھلا کیا نکلا

ساغر مہدی

فائدہ ہم کو مٹانے سے بھلا کیا نکلا

ساغر مہدی

MORE BYساغر مہدی

    فائدہ ہم کو مٹانے سے بھلا کیا نکلا

    سر سے سودا نہ گیا دل سے نہ جذبہ نکلا

    بے مزہ ایسے ہوئے تلخئ حالات سے ہم

    شہد کا ذائقہ چکھا تو وہ کڑوا نکلا

    دوست جتنے تھے وہ سب ہو گئے آپس میں حریف

    کیسی محفل تھی جو نکلا وہ اکیلا نکلا

    دل کے ہر ٹکڑے میں محفوظ رہا عکس ترا

    آئنہ ٹوٹ کے بھی آئنہ خانہ نکلا

    سر راہے نہ سہی ہاں سر مقتل ہی سہی

    غم سے ملنے کا چلو کچھ تو بہانہ نکلا

    قہقہوں کا جو سمندر تھا ہر اک محفل میں

    گھر میں وہ شخص اداسی کا جزیرہ نکلا

    چشم احباب بھی نیچی ہے تو میں بھی نادم

    جس کنویں میں مجھے پھینکا تھا وہ اندھا نکلا

    حال دل خود ہی کہا خود ہی سنا ہے ساغرؔ

    ہر مخاطب مری تقدیر سے بہرا نکلا

    مأخذ :

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY