فنا کے راستے پھولوں سے بھر گئے شاید

خلیل مامون

فنا کے راستے پھولوں سے بھر گئے شاید

خلیل مامون

MORE BYخلیل مامون

    فنا کے راستے پھولوں سے بھر گئے شاید

    ستارے منزل شب سے گزر گئے شاید

    نہ آہ دل میں نہ آنکھوں میں اشک باقی ہیں

    حواس رشتۂ غم پار کر گئے شاید

    جو نور بھرتے تھے ظلمات شب کے صحرا میں

    وہ چاند تارے فلک سے اتر گئے شاید

    مہکتے پھول جو یادوں میں مسکراتے تھے

    نفس کی تیز ہوا سے بکھر گئے شاید

    وفا کی راہ میں جو قافلے رواں تھے کہیں

    وہ منزلوں کا پتا ہی بسر گئے شاید

    چلو یہاں سے کہیں اور مر رہیں مامونؔ

    طیور غم بھی مکاں خالی کر گئے شاید

    مآخذ:

    • کتاب : Azkar (Pg. 138)
    • Author : Amjad Hussain Hafiz Karnataki
    • مطبع : Karnataka Urdu Academy (issue:23 April,May,June-2013)
    • اشاعت : issue:23 April,May,June-2013

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY