غفلت میں کٹی عمر نہ ہشیار ہوئے ہم

راسخ عظیم آبادی

غفلت میں کٹی عمر نہ ہشیار ہوئے ہم

راسخ عظیم آبادی

MORE BYراسخ عظیم آبادی

    غفلت میں کٹی عمر نہ ہشیار ہوئے ہم

    سوتے ہی رہے آہ نہ بیدار ہوئے ہم

    یہ بے خبری دیکھ کہ جب ہم سفر اپنے

    کوسوں گئے تب آہ خبردار ہوئے ہم

    صیاد ہی سے پوچھو کہ ہم کو نہیں معلوم

    کیا جانئے کس طرح گرفتار ہوئے ہم

    تھی چشم کہ تو رحم کرے گا کبھو سو ہائے

    غصہ کے بھی تیرے نہ سزا وار ہوئے ہم

    آتا ہی نہ اس کوچے سے تابوت ہمارا

    دفن آخر اسی کے پس دیوار ہوئے ہم

    زخم کہن اپنا ہوا ناسور پہ راسخؔ

    مرہم کے کسو سے نہ طلب گار ہوئے ہم

    RECITATIONS

    فصیح اکمل

    فصیح اکمل

    فصیح اکمل

    غفلت میں کٹی عمر نہ ہشیار ہوئے ہم فصیح اکمل

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY