غم خانۂ ہستی میں ہے مہماں کوئی دن اور

اختر شیرانی

غم خانۂ ہستی میں ہے مہماں کوئی دن اور

اختر شیرانی

MORE BYاختر شیرانی

    غم خانۂ ہستی میں ہے مہماں کوئی دن اور

    کر لے ہمیں تقدیر پریشاں کوئی دن اور

    مر جائیں گے جب ہم تو بہت یاد کرے گی

    جی بھر کے ستا لے شب ہجراں کوئی دن اور

    تربت وہ جگہ ہے کہ جہاں غم ہے نہ حیرت

    حیرت کدۂ غم میں ہیں حیراں کوئی دن اور

    یاروں سے گلہ ہے نہ عزیزوں سے شکایت

    تقدیر میں ہے حسرت و حرماں کوئی دن اور

    پامال خزاں ہونے کو ہیں مست بہاریں

    ہے سیر گل و حسن‌ گلستاں کوئی دن اور

    ہم سا نہ ملے گا کوئی غم دوست جہاں میں

    تڑپا لے غم گردش دوراں کوئی دن اور

    قبروں کی جو راتیں ہیں وہ قبروں میں کٹیں گی

    آباد ہیں یہ زندہ شبستاں کوئی دن اور

    رنگینی و نزہت پہ نہ مغرور ہو بلبل

    ہے رنگ بہار چمنستاں کوئی دن اور

    آخر کو وہی ہم وہی ظلمات شب غم

    ہے نور رخ ماہ درخشاں کوئی دن اور

    آزاد ہوں عالم سے تو آزاد ہوں غم سے

    دنیا ہے ہمارے لیے زنداں کوئی دن اور

    ہستی کبھی قدرت کا اک احسان تھی ہم پر

    اب ہم پہ ہے قدرت کا یہ احساں کوئی دن اور

    لعنت تھی گناہوں کی ندامت مرے حق میں

    ہے شکر کہ اس سے ہیں پشیماں کوئی دن اور

    شیون کو کوئی خلد بریں میں یہ خبر دے

    دنیا میں اب اخترؔ بھی ہے مہماں کوئی دن اور

    مآخذ:

    • کتاب : Kulliyat-e-Akhtar Shirani (Pg. 269)
    • Author : Akhtar Shirani
    • مطبع : Modern Publishing House, Daryaganj New delhi (1997)
    • اشاعت : 1997

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY