Font by Mehr Nastaliq Web

aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر

گھر بنانے میں تمام اہل سفر لگ گئے ہیں

فرحت احساس

گھر بنانے میں تمام اہل سفر لگ گئے ہیں

فرحت احساس

MORE BYفرحت احساس

    گھر بنانے میں تمام اہل سفر لگ گئے ہیں

    کیا تماشے یہ سر راہ گزر لگ گئے ہیں

    توڑ کر بند قبا جسم اڑا جاتا ہے

    کیسے اس خاک کی دیوار کو پر لگ گئے ہیں

    صرف اک تجھ سے بچھڑنے کا نہیں خوف ہمیں

    ساتھ میں اب کے کئی اور بھی ڈر لگ گئے ہیں

    سبزۂ منتظر اس درجہ نمو کو پہنچا

    دیکھ ہم در پہ ترے مثل شجر لگ گئے ہیں

    جشن گریہ تو کیا تھا مری آنکھوں نے شروع

    ساتھ اب شہر کے سب دیدۂ تر لگ گئے ہیں

    کیسی افواہ اڑی تجھ سے مرے رشتے کی

    سب ترے چاہنے والے مرے گھر لگ گئے ہیں

    حسن تو ہے ہی نئی طرح سے آتش انگیز

    آئنے کو بھی نئے برق و شرر لگ گئے ہیں

    کارخانہ ہے اسی حسن کا عالم سارا

    بس جدھر اس نے لگایا ہے ادھر لگ گئے ہیں

    جس کی پاداش میں ہے در بہ دری کا یہ عتاب

    پھر اسی کام پہ ہم شہر بدر لگ گئے ہیں

    فرحتؔ احساس میں کیا دیکھا جو اس کے پیچھے

    آنکھیں دکھلاتے ہوئے اہل نظر لگ گئے ہیں

    مأخذ :
    • کتاب : محبت کرکے دیکھو نہ (Pg. 102)
    • Author :فرحت احساس
    • مطبع : ریختہ پبلی کیشنز (2019)
    • اشاعت : First

    یہ متن درج ذیل زمرے میں بھی شامل ہے

    ગુજરાતી ભાષા-સાહિત્યનો મંચ : રેખ્તા ગુજરાતી

    ગુજરાતી ભાષા-સાહિત્યનો મંચ : રેખ્તા ગુજરાતી

    મધ્યકાલથી લઈ સાંપ્રત સમય સુધીની ચૂંટેલી કવિતાનો ખજાનો હવે છે માત્ર એક ક્લિક પર. સાથે સાથે સાહિત્યિક વીડિયો અને શબ્દકોશની સગવડ પણ છે. સંતસાહિત્ય, ડાયસ્પોરા સાહિત્ય, પ્રતિબદ્ધ સાહિત્ય અને ગુજરાતના અનેક ઐતિહાસિક પુસ્તકાલયોના દુર્લભ પુસ્તકો પણ તમે રેખ્તા ગુજરાતી પર વાંચી શકશો

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے