گو آج اندھیرا ہے کل ہوگا چراغاں بھی

ضیا فتح آبادی

گو آج اندھیرا ہے کل ہوگا چراغاں بھی

ضیا فتح آبادی

MORE BY ضیا فتح آبادی

    INTERESTING FACT

    مدراس 1954

    گو آج اندھیرا ہے کل ہوگا چراغاں بھی

    تخریب میں شامل ہے تعمیر کا ساماں بھی

    مظہر ترے جلووں کے مامن مری وحشت کے

    کہسار و گلستاں بھی صحرا و بیاباں بھی

    دم توڑتی موجیں کیا ساحل کا پتہ دیں گی

    ٹھہری ہوئی کشتی ہے خاموش ہے طوفاں بھی

    مجبور غم دنیا دل سے تو کوئی پوچھے

    احساس کی رگ میں ہے خار غم جاناں بھی

    بغض و حسد و نفرت ناکامی و محرومی

    انسانوں کی بستی میں کیا ہے کوئی انساں بھی

    دیوانۂ الفت کو در سے ترے ملتا ہے

    ہر زخم کا مرہم بھی ہر درد کا درماں بھی

    لیتی ہے جب انگڑائی بیدار کرن کوئی

    ہوتا ہے ضیاؔ خود ہی رقصاں بھی غزل خواں بھی

    مآخذ:

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY