گلوں کے ساتھ اجل کے پیام بھی آئے

غلام ربانی تاباں

گلوں کے ساتھ اجل کے پیام بھی آئے

غلام ربانی تاباں

MORE BYغلام ربانی تاباں

    گلوں کے ساتھ اجل کے پیام بھی آئے

    بہار آئی تو گلشن میں دام بھی آئے

    ہمیں نہ کر سکے تجدید آرزو ورنہ

    ہزار بار کسی کے پیام بھی آئے

    چلا نہ کام اگرچہ بہ زعم راہبری

    جناب خضر علیہ السلام بھی آئے

    جو تشنہ کام ازل تھے وہ تشنہ کام رہے

    ہزار دور میں مینا و جام بھی آئے

    بڑے بڑوں کے قدم ڈگمگا گئے تاباںؔ

    رہ حیات میں ایسے مقام بھی آئے

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    گلوں کے ساتھ اجل کے پیام بھی آئے نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY