حال پوچھا نہ کرے ہاتھ ملایا نہ کرے

کاشف حسین غائر

حال پوچھا نہ کرے ہاتھ ملایا نہ کرے

کاشف حسین غائر

MORE BYکاشف حسین غائر

    حال پوچھا نہ کرے ہاتھ ملایا نہ کرے

    میں اسی دھوپ میں خوش ہوں کوئی سایہ نہ کرے

    میں بھی آخر ہوں اسی دشت کا رہنے والا

    کیسے مجنوں سے کہوں خاک اڑایا نہ کرے

    آئنہ میرے شب و روز سے واقف ہی نہیں

    کون ہوں کیا ہوں مجھے یاد دلایا نہ کرے

    عین ممکن ہے چلی جائے سماعت میری

    دل سے کہیے کہ بہت شور مچایا نہ کرے

    مجھ سے رستوں کا بچھڑنا نہیں دیکھا جاتا

    مجھ سے ملنے وہ کسی موڑ پہ آیا نہ کرے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY