ہے دل کو جو یاد آئی فلک پیر کسی کی

بہادر شاہ ظفر

ہے دل کو جو یاد آئی فلک پیر کسی کی

بہادر شاہ ظفر

MORE BY بہادر شاہ ظفر

    ہے دل کو جو یاد آئی فلک پیر کسی کی

    آنکھوں کے تلے پھرتی ہے تصویر کسی کی

    گریہ بھی ہے نالہ بھی ہے اور آہ و فغاں بھی

    پر دل میں ہوئی اس کے نہ تاثیر کسی کی

    ہاتھ آئے ہے کیا خاک ترے خاک کف پا

    جب تک کہ نہ قسمت میں ہو اکسیر کسی کی

    یارو وہ ہے بگڑا ہوا باتیں نہ بناؤ

    کچھ پیش نہیں جانے کی تقریر کسی کی

    نازاں نہ ہو منعم کہ جہاں تیرا محل ہے

    ہووے گی یہاں پہلے بھی تعمیر کسی کی

    میری گرہ دل نہ کھلی ہے نہ کھلے گی

    جب تک نہ کھلے زلف گرہ گیر کسی کی

    آتا بھی اگر ہے تو وہ پھر جائے ہے الٹا

    جس وقت الٹ جائے ہے تقدیر کسی کی

    اس ابرو و مژگاں سے ظفرؔ تیز زیادہ

    خنجر نہ کسی کا ہے نہ شمشیر کسی کی

    جو دل سے ادھر جائے نظر دل ہو گرفتار

    مجرم ہو کوئی اور ہو تقصیر کسی کی

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    ہے دل کو جو یاد آئی فلک پیر کسی کی نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY