حلقہ حلقہ گھر بنا لخت دل بیتاب کا

منیرؔ  شکوہ آبادی

حلقہ حلقہ گھر بنا لخت دل بیتاب کا

منیرؔ  شکوہ آبادی

MORE BYمنیرؔ  شکوہ آبادی

    حلقہ حلقہ گھر بنا لخت دل بیتاب کا

    زلف جاناں میں ہے عالم سبحۂ سیماب کا

    سونے میں نظارہ کر لوں روے‌ عالمتاب کا

    خوف کیا دز‌د نگہ کو ہے شب مہتاب کا

    کھیل بھی بیتاب تھا طفلی میں اس بیتاب کا

    پر اڑاتا تھا ہوا پر ماہیٔ بے آب کا

    رک نہیں سکتا ہے دریا دیدۂ پر آب کا

    پاٹ ہے رومال میرا دامن سیلاب کا

    خواب میں یاران رفتہ سے ملاقاتیں ہوئیں

    ہم نے سمجھا خضر غفلت کو رہ احباب کا

    کہتے ہیں سب دیکھ کر بیتاب میرا عضو عضو

    آدمی اب تک نہیں دیکھا کہیں سیماب کا

    نیند کی صورت نہیں دیکھا بہ جز داغ جگر

    پردہ میری آنکھ میں شاید کہ ہے کمخواب کا

    لگ گئی آگ آتش رخ سے نقاب یار میں

    دیکھ لو جلتا ہے کونا چادر مہتاب کا

    مجلس بے شمع وہ ہیں شمع بے مجلس ہوں میں

    غم مرا احباب کو ہے مجھ کو غم احباب کا

    ہجر جاناں کے الم میں ہم فرشتے بن گئے

    دھیان مدت سے چھٹا آب طعام و خواب کا

    اہل تسلیم و رضا سے سر بلندوں کی ہے زیب

    خوش نما زیر منار و قرب ہے محراب کا

    جھک کے ہم نے بوسۂ ابرو کی جب مانگی دعا

    حلقۂ آغوش پر عالم ہوا محراب کا

    اس قدر فریاد محشر خیز اے بلبل نہ کر

    دیکھنا تختہ نہ الٹے گلشن شاداب کا

    مہر دست آویز غم ہے ہر بشر کا داغ غم

    دل ہے محضر صحبت گم کردۂ احباب کا

    بے تکلف آ گیا وہ مہ دم فکر سخن

    رہ گیا پاس ادب سے قافیہ آداب کا

    پرورش تقدیر کرتی ہے مجھے بہر قضا

    ذبح کو پروردہ کرنا کام ہے قصاب کا

    نشہ جرات زیادہ ہو گیا اے مے کشو

    ساغر مے بن گیا کاسہ سر سہراب کا

    موئے آتش دید ساں بل کھائے وہ موئے کمر

    میں جو لکھوں گرم مضموں اس طلائی ڈاب کا

    ہو گیا ہوں میں نقاب روئے روشن پر فقیر

    چاہیے تہ بند مجھ کو چادر مہتاب کا

    خال و خط سے عیب اس کے روئے اقدس کو نہیں

    حسن ہے مصحف میں ہونا نقطۂ اعراب کا

    دوست دشمن سے زیادہ تیز رکھتے ہیں چھری

    برہمن بھی پیشہ اب کرنے لگے قصاب کا

    ہونٹ پر انگشت رنگیں رکھ کے وہ کہنے لگے

    شاخ مرجاں نے ثمر پیدا کیا عناب کا

    لاغری کے ساتھ بیتابی یہی اے بحر حسن

    خار ہے یہ جسم لاغر ماہیٔ بے آب کا

    تیری فرقت میں جو آئے بھول کر آنکھوں میں نیند

    مردمان چشم نے پھر منہ نہ دیکھا خواب کا

    میرے مرغ دل کی بیتابی اڑائی کس طرح

    حوصلہ ایسا نہیں ہے طائر سیماب کا

    خدمت اقدس میں چل کر یہ غزل پڑھ اے منیرؔ

    شہرہ سب اہل سخن میں ہے ترے نواب کا

    مآخذ:

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY