ہم جسے سمجھتے تھے سعیٔ رائیگاں یارو

فرید جاوید

ہم جسے سمجھتے تھے سعیٔ رائیگاں یارو

فرید جاوید

MORE BYفرید جاوید

    ہم جسے سمجھتے تھے سعیٔ رائیگاں یارو

    اب اسی سے ملنا ہے اپنا کچھ نشاں یارو

    رک سکے تو ممکن ہے نغمگی میں ڈھل جائے

    اٹھ رہی ہے سینوں میں شورش‌ فغاں یارو

    کیا خیال ہے تم کو کیا ملال ہے تم کو

    پوچھتا کوئی تم سے کیوں ہوں سرگراں یارو

    برق سے تصادم کا وقت آ ہی جائے گا

    ڈھونڈتے رہو گے تم برق سے اماں یارو

    سچ سے پیار کرنے کا حوصلہ نہیں ہے اور

    مصلحت کی راہوں سے دل ہے بد گماں یارو

    کچھ سرور تو ہوگا کوئی نور تو ہوگا

    جس سے ظلمت شب میں دل ہے نغمہ خواں یارو

    کم ثبات ہوتی ہے تازگی و رعنائی

    دیر تک نہیں رہتا صبح کا سماں یارو

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY