ہم کو جنوں کیا سکھلاتے ہو ہم تھے پریشاں تم سے زیادہ

مجروح سلطانپوری

ہم کو جنوں کیا سکھلاتے ہو ہم تھے پریشاں تم سے زیادہ

مجروح سلطانپوری

MORE BY مجروح سلطانپوری

    ہم کو جنوں کیا سکھلاتے ہو ہم تھے پریشاں تم سے زیادہ

    چاک کئے ہیں ہم نے عزیزو چار گریباں تم سے زیادہ

    چاک جگر محتاج رفو ہے آج تو دامن صرف لہو ہے

    اک موسم تھا ہم کو رہا ہے شوق بہاراں تم سے زیادہ

    عہد وفا یاروں سے نبھائیں ناز حریفاں ہنس کے اٹھائیں

    جب ہمیں ارماں تم سے سوا تھا اب ہیں پشیماں تم سے زیادہ

    ہم بھی ہمیشہ قتل ہوئے اور تم نے بھی دیکھا دور سے لیکن

    یہ نہ سمجھنا ہم کو ہوا ہے جان کا نقصاں تم سے زیادہ

    جاؤ تم اپنے بام کی خاطر ساری لویں شمعوں کی کتر لو

    زخم کے مہر و ماہ سلامت جشن چراغاں تم سے زیادہ

    دیکھ کے الجھن زلف دوتا کی کیسے الجھ پڑتے ہیں ہوا سے

    ہم سے سیکھو ہم کو ہے یارو فکر نگاراں تم سے زیادہ

    زنجیر و دیوار ہی دیکھی تم نے تو مجروحؔ مگر ہم

    کوچہ کوچہ دیکھ رہے ہیں عالم زنداں تم سے زیادہ

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    مجروح سلطانپوری

    مجروح سلطانپوری

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    شکیل جمالی

    شکیل جمالی

    مجروح سلطانپوری

    مجروح سلطانپوری

    نعمان شوق

    ہم کو جنوں کیا سکھلاتے ہو ہم تھے پریشاں تم سے زیادہ نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed from your favorites