ہم نشیں رات ہے تو رات بھی ڈھل جائے گی

اختر ضیائی

ہم نشیں رات ہے تو رات بھی ڈھل جائے گی

اختر ضیائی

MORE BYاختر ضیائی

    ہم نشیں رات ہے تو رات بھی ڈھل جائے گی

    صبح دم صورت حالات بدل جائے گی

    حدت شوق سلامت ہے تو زنجیر جفا

    صورت شمع کسی روز پگھل جائے گی

    ان کا دم بھرتے ہو تو غم نہ کرو آخر کار

    ان پہ دم دینے کی حسرت بھی نکل جائے گی

    ہم صفیرو کبھی مٹتی ہے تمنائے بہار

    یہ کسی پھول کسی شعلے میں ڈھل جائے گی

    یہی بہتر ہے کہ قربان وفا ہو جائے

    جاں اگر آج نہ جائے گی تو کل جائے گی

    کس کو معلوم تھا ملبوس صبا میں صرصر

    آ کے گلشن میں شگوفوں کو مسل جائے گی

    اب کے ساون بھی اگر ابر نہ برسا اخترؔ

    جو کلی شاخ پہ نکلے گی وہ جل جائے گی

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے