ہم سے مل کر کوئی گفتگو کیجیے

فرحت عباس

ہم سے مل کر کوئی گفتگو کیجیے

فرحت عباس

MORE BYفرحت عباس

    ہم سے مل کر کوئی گفتگو کیجیے

    پوری دل کی یہی جستجو کیجیے

    آپ کی دشمنی کا میں ہوں معترف

    وار کیجے مگر دو بدو کیجیے

    دامن دل کی لاکھوں ہوئیں دھجیاں

    کیجیے کیجیے اب رفو کیجیے

    پھول موسم میں کانٹوں کے بیوپار سے

    جسم و جان و جگر مت لہو کیجیے

    زندگی ہو مگر درد ہجراں نہ ہو

    ایسے جینے کی کیا آرزو کیجیے

    آپ کتنے حسیں ہیں نہیں جانتے

    آئنے کو ذرا روبرو کیجیے

    فرحتؔ جاں کی کیوں جستجو کیجیے

    بجھتے جیون کی کیا اب نمو کیجیے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY