ہم تم جب بھی پیار کریں گے جان و دل صدقے ہوں گے

اعجاز گل

ہم تم جب بھی پیار کریں گے جان و دل صدقے ہوں گے

اعجاز گل

MORE BYاعجاز گل

    ہم تم جب بھی پیار کریں گے جان و دل صدقے ہوں گے

    روحوں کی خوشبو میں ہوں گی باہوں کے گجرے ہوں گے

    پیشروو تم بیت چکے اب ہم لوگوں کی باری ہے

    زندانوں کے در تو وا ہوں ہم آگے آگے ہوں گے

    گمنامی کی گلیوں میں تاریخ کہاں تک پہنچے گی

    ایک تمہی سقراط نہیں ہو اور بہت گزرے ہوں گے

    حسن اگر زنجیر کیا ہے عشق بھی پھر زنجیر کرو

    ورنہ بات بہت پھیلے گی دور تلک چرچے ہوں گے

    اے چکوال سے آنے والو کچھ تو حال احوال کہو

    پھول سے عارض چاند سے چہرے تم نے بھی دیکھے ہوں گے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY