ہمارے سامنے بیگانہ وار آؤ نہیں

فرید جاوید

ہمارے سامنے بیگانہ وار آؤ نہیں

فرید جاوید

MORE BYفرید جاوید

    ہمارے سامنے بیگانہ وار آؤ نہیں

    نیاز اہل محبت کو آزماؤ نہیں

    ہمیں بھی اپنی تباہی پہ رنج ہوتا ہے

    ہمارے حال پریشاں پہ مسکراؤ نہیں

    جو تار ٹوٹ گئے ہیں وہ جڑ نہیں سکتے

    کرم کی آس نہ دو بات کو بڑھاؤ نہیں

    دیے خلوص و محبت کے بجھتے جاتے ہیں

    گراں نہ ہو تو ہمیں اس قدر ستاؤ نہیں

    دل و نگاہ کو کب تک کوئی بچھائے رہے

    یہ دیکھ کر کہ ادھر سے کوئی جھکاؤ نہیں

    یہ اور بات ہے کانٹوں میں جی بہل جائے

    نہیں کہ لالہ و گل سے مجھے لگاؤ نہیں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY