ہر اک نے کہا کیوں تجھے آرام نہ آیا

مصطفی زیدی

ہر اک نے کہا کیوں تجھے آرام نہ آیا

مصطفی زیدی

MORE BY مصطفی زیدی

    ہر اک نے کہا کیوں تجھے آرام نہ آیا

    سنتے رہے ہم لب پہ ترا نام نہ آیا

    دیوانے کو تکتی ہیں ترے شہر کی گلیاں

    نکلا تو ادھر لوٹ کے بد نام نہ آیا

    مت پوچھ کہ ہم ضبط کی کس راہ سے گزرے

    یہ دیکھ کہ تجھ پر کوئی الزام نہ آیا

    کیا جانیے کیا بیت گئی دن کے سفر میں

    وہ منتظر شام سر شام نہ آیا

    یہ تشنگیاں کل بھی تھیں اور آج بھی زیدیؔ

    اس ہونٹ کا سایہ بھی مرے کام نہ آیا

    مآخذ:

    • کتاب : Kulliyat-e-Mustafa Zaidi(Gireban) (Pg. 8)
    • Author : Mustafa Zaidi
    • مطبع : Alhamd Publications (2011)
    • اشاعت : 2011

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY