ہر نفس اک مستقل فریاد ہے

ثاقب کانپوری

ہر نفس اک مستقل فریاد ہے

ثاقب کانپوری

MORE BYثاقب کانپوری

    ہر نفس اک مستقل فریاد ہے

    کتنی پر غم عشق کی روداد ہے

    گھٹ رہی ہیں میرے دل کی قوتیں

    اب یہ شاید آخری فریاد ہے

    ہو گئی شاید کہ اب تکمیل عشق

    ورنہ کیوں شور مبارک باد ہے

    جسم پابند تعین ہو تو ہو

    روح تو ہر قید سے آزاد ہے

    پھر کہاں گلشن میں وہ آسودگی

    آشیاں جب وقف برق و باد ہے

    دیکھیے انجام کار کائنات

    دل مرا پھر مائل فریاد ہے

    جس میں ثاقبؔ تھا وہ مجھ سے ہمکنار

    مجھ کو وہ منظر ابھی تک یاد ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY