حشر میں پھر وہی نقشا نظر آتا ہے مجھے

تاجور نجیب آبادی

حشر میں پھر وہی نقشا نظر آتا ہے مجھے

تاجور نجیب آبادی

MORE BYتاجور نجیب آبادی

    حشر میں پھر وہی نقشا نظر آتا ہے مجھے

    آج بھی وعدۂ فردا نظر آتا ہے مجھے

    خلش عشق مٹے گی مرے دل سے جب تک

    دل ہی مٹ جائے گا ایسا نظر آتا ہے مجھے

    رونق چشم تماشا ہے مری بزم خیال

    اس میں وہ انجمن آرا نظر آتا ہے مجھے

    ان کا ملنا ہے نظر بندیٔ تدبیر اے دل

    صاف تقدیر کا دھوکا نظر آتا ہے مجھے

    تجھ سے میں کیا کہوں اے سوختۂ جلوۂ طور

    دل کے آئینے میں کیا کیا نظر آتا ہے مجھے

    دل کے پردوں میں چھپایا ہے ترے عشق کا راز

    خلوت دل میں بھی پردا نظر آتا ہے مجھے

    عبرت آموز ہے بربادئ دل کا نقشہ

    رنگ نیرگئ دنیا نظر آتا ہے مجھے

    مآخذ:

    • کتاب : intekhab-e-zarrin (Pg. 224)
    • Author : Khvaja Mohammad Zakariya
    • مطبع : Sangeet publication (2009)
    • اشاعت : 2009

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY