ہستی کو تری بس ہے میاں گل کی اشارت

محمد رفیع سودا

ہستی کو تری بس ہے میاں گل کی اشارت

محمد رفیع سودا

MORE BYمحمد رفیع سودا

    ہستی کو تری بس ہے میاں گل کی اشارت

    کافی ہے مرے نالے کو بلبل کی اشارت

    فتویٰ طلب اے یار نہ قاضی سے کروں میں

    توبہ شکنی کو ہے مری مل کی اشارت

    مل بیٹھ میری آنکھوں میں ہے ساعت نیک آج

    یہ چشم ترازو ہیں ترے تل کی اشارت

    ہے باعث جمعیت دل ایک جہاں کی

    اے شوخ پریشانیٔ کاکل کی اشارت

    تقویٰ کے نہیں بار سے قد خم ترا اے شیخ

    اک خلق میں مشہور ہے اس پل کی اشارت

    یاد آئے تری زلف نہ مجھ کو جو چمن میں

    دے تاب مرے دل کو نہ سنبل کی اشارت

    عشاق کو تجھ چشم کے حاجت نہیں مے کی

    بے ہوش کرے سوداؔ کو قلقل کی اشارت

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY