ہوا و ابر کو آسودۂ مفہوم کر دیکھوں

ثروت حسین

ہوا و ابر کو آسودۂ مفہوم کر دیکھوں

ثروت حسین

MORE BYثروت حسین

    ہوا و ابر کو آسودۂ مفہوم کر دیکھوں

    شروع فصل گل ہے ان لبوں کو چوم کر دیکھوں

    کہاں کس آئنے میں کون سا چہرہ دمکتا ہے

    ذرا حیرت سرائے آب و گل میں گھوم کر دیکھوں

    مرے سینے میں دل ہے یا کوئی شہزادۂ خود سر

    کسی دن اس کو تاج و تخت سے محروم کر دیکھوں

    گزر گاہیں جہاں پر ختم ہوتی ہیں وہاں کیا ہے

    کوئی رہرو پلٹ کر آئے تو معلوم کر دیکھوں

    بہت دن دشت و در میں خاک اڑاتے ہوئے ثروتؔ

    اب اپنے صحن میں اپنی فضا میں جھوم کر دیکھوں

    مآخذ:

    • کتاب : Funoon (Monthly) (Pg. 361)
    • Author : Ahmad Nadeem Qasmi
    • مطبع : 4 Maklood Road, Lahore (Edition Nov. Dec. 1985,Issue No. 23)
    • اشاعت : Edition Nov. Dec. 1985,Issue No. 23

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY