حوادثات ضروری ہیں زندگی کے لئے

عبرت مچھلی شہری

حوادثات ضروری ہیں زندگی کے لئے

عبرت مچھلی شہری

MORE BYعبرت مچھلی شہری

    حوادثات ضروری ہیں زندگی کے لئے

    کہ موڑ ہوتے ہیں ہر راہ ہر گلی کے لئے

    نہ کوئی میرے لئے ہے نہ میں کسی کے لئے

    بس ایک لفظ ندامت ہوں زندگی کے لئے

    وہ تتلیوں کی طرح مجھ سے اور دور ہوا

    بڑھایا جس کی طرف ہاتھ دوستی کے لئے

    یہ عضو عضو مرا پیاس سے سلگتا ہے

    مجھے لہو کی ضرورت ہے تشنگی کے لئے

    اب اس سے بڑھ کے مرا امتحان کیا ہوگا

    میں زہر پی کے جیا ہوں تری خوشی کے لئے

    جو ہو سکے تو خود اشکوں کو پونچھ لو عبرتؔ

    کسی کے پاس کہاں وقت دل دہی کے لئے

    مأخذ :
    • کتاب : Aansuwon Ki Barat (Pg. 60)
    • Author : Ibrat Machhali Shahri
    • مطبع : News Town Publishers (2013)
    • اشاعت : 2013

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY
    بولیے