ہزار ہم سفروں میں سفر اکیلا ہے

ساغر مہدی

ہزار ہم سفروں میں سفر اکیلا ہے

ساغر مہدی

MORE BYساغر مہدی

    ہزار ہم سفروں میں سفر اکیلا ہے

    یہ انتشار کہ اک اک بشر اکیلا ہے

    گلو بریدہ سبھی ہیں مگر زہے توقیر

    بلند نوک سناں پر یہ سر اکیلا ہے

    نہ پتیاں ہیں نہ پھل پھول پھر بھی چھاؤں تو دیکھ

    سنا تھا میں نے کہ غم کا شجر اکیلا ہے

    یہ بھیڑ خاک دکھائے گی شان بے جگری

    یہ اس کا حق ہے جو سینہ سپر اکیلا ہے

    لپٹ کے روح سے کہتا رہا بدن کل رات

    نہ جاؤ چھوڑ کے مجھ کو کہ گھر اکیلا ہے

    متاع قلب و جگر کس کو سونپ دوں ساغرؔ

    ہجوم بے ہنری میں ہنر اکیلا ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY