ہجر میں اتنا خسارہ تو نہیں ہو سکتا

افضل گوہر راؤ

ہجر میں اتنا خسارہ تو نہیں ہو سکتا

افضل گوہر راؤ

MORE BY افضل گوہر راؤ

    ہجر میں اتنا خسارہ تو نہیں ہو سکتا

    ایک ہی عشق دوبارہ تو نہیں ہو سکتا

    چند لوگوں کی محبت بھی غنیمت ہے میاں

    شہر کا شہر ہمارا تو نہیں ہو سکتا

    کب تلک قید رکھوں آنکھ میں بینائی کو

    صرف خوابوں سے گزارا تو نہیں ہو سکتا

    رات کو جھیل کے بیٹھا ہوں تو دن نکلا ہے

    اب میں سورج سے ستارہ تو نہیں ہو سکتا

    دل کی بینائی کو بھی ساتھ ملا لے گوہرؔ

    آنکھ سے سارا نظارا تو نہیں ہو سکتا

    0
    COMMENT
    COMMENTS
    تبصرے دیکھیے

    Critique mode ON

    Tap on any word to submit a critique about that line. Word-meanings will not be available while you’re in this mode.

    OKAY

    SUBMIT CRITIQUE

    نام

    ای-میل

    تبصره

    Thanks, for your feedback

    Critique draft saved

    EDIT DISCARD

    CRITIQUE MODE ON

    TURN OFF

    Discard saved critique?

    CANCEL DISCARD

    CRITIQUE MODE ON - Click on a line of text to critique

    TURN OFF

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed from your favorites